آسمانی بجلی زمین پر گر نے سے کیا ہوتا ہے ؟

بول نیوز  |  Jul 10, 2020

 شہر قائد میں گرمی کا زور ٹوٹ گیا اور مختلف علاقوں میں گرج  چمک کے ساتھ  بارش کا آغاز ہوگیا ہے ۔

 گرمی سے ستائی عوام اس  باران ِ رحمت  سے خوب خوب لطف اندوز ہورہی ہے بارش کے خوب مزے لے رہی ہیں ۔

بارش کے دوران گرجنے والی آسمانی بجلی قدرت کا ایک عجیب و غریب مظہر ہوتا ہے۔ بظاہر تو آسمانی بجلی چمکتے ہوئے بہت خوبصورت لگ رہی ہوتی ہے لیکن جب یہ شدت کے ساتھ گرجتی ہے تو سب کے رونگٹے کھڑے ہوجاتے ہیں۔

لیکن کیا آپ کو معلوم ہے کہ آسمانی بجلی کا ایک کوندا (کڑاکا) فضا میں 8 سے 20 ہزار درجے سینٹی گریڈ تک حرارت پیدا کرتا ہے جو سورج کی سطح پر پائی جانے والی حرارت سے بھی کئی گنا بڑھ کر ہوتا ہے۔

یہ بات یاد رہے کہ گرج چمک کم مدتی اور خطرناک ہوتے ہیں۔ اگر آپ کو بادلوں کی گونج سنائی دے تو اس کا مطلب ہے کہ طوفان قریب ہی ہے اور آسمانی بجلی آپ پر گرنے کے امکانات بھی ہوتے ہیں۔ آسمانی بجلی طوفان سے 10 میل دور تک گر سکتی ہے۔

آسمانی بجلی اس وقت پیدا ہوتی ہے جب بادل اور تیز ہوا ایک دوسرے سے رگڑ کھاتے ہیں۔ ہماری زمین پر موجود اشیا پر عموماً مثبت چارج ہوتا ہے اور یوں بجلی کا کڑاکا زمین کی جانب لپکنے کی کوشش کرتا ہے جسے زمین پر بجلی گرنا کہتے ہیں۔

زمین پر آسمانی  بجلی  گرنے سے جنگلات میں آگ لگ جاتی ہے اور لوگ اور جانور جل کر راکھ ہو جاتے ہیں۔

مزید یہ کہ شدید تیز برسات کے دوران جب آسمانی بجلی کا زمین سے ٹکراؤ ہوتا ہے تو اس سے ایک کیمیائی رد عمل ہوتا ہے جس کے ذریعے یہ نائٹرو آکسائیڈ گیس خارج کرتی ہے۔

 بعض اوقات آسمانی بجلی گرنے کی اطلاعات موصول ہوتی رہتی ہیں اور کئی لوگ اور جانور اس قدرتی آفت کی لپیٹ میں آکر ہلاک ہوجاتے ہیں۔ البتہ کچھ احتیاطی تدابیر اختیار کر کے اس سے جان بچائی جا سکتی ہے۔

 

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More