سندھ: بچوں میں سوزش کی بیماری بڑھنے لگی

سماء نیوز  |  Aug 14, 2020

بچوں کی صحت پر کام کرنے والے غیرسرکاری ادارے ( چائلڈ لائف فاؤنڈیشن) نے متنبہ کیا ہے کہ سندھ میں بچوں کے اعضاء کی سوزش کی بیماری (ملٹی سسٹم انفلیمیٹری سنڈروم)  بڑھ رہی ہے۔ والدین علامات ظاہر ہونے کی صورت سرکاری ٹیچنگ اسپتالوں میں قائم بچوں کے ہنگامی رومز میں لے کر آئیں تاکہ جلد از جلد علاج شروع کیا جاسکے۔

چائلڈ لائف فاؤنڈیشن کی ڈاکٹر حبا عتیق نے کہا ہے کہ اگر والدین بچوں میں کوئی ایسی علامت جیسے غیر معمولی کمزوری یا تھکاوٹ، سرخ خارش، پیٹ میں درد، الٹی اور اسہال، سرخ / پھٹے ہونٹوں، سرخ آنکھیں اور سوجن دیکھیں تو انہیں اسپتال لانے میں تاخیر نہ کریں۔ سندھ اور بلوچستان کے تمام سرکاری ٹیچنگ اسپتالوں میں بچوں کیلئے ایمرجنسی رومز قائم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بچوں میں خاص قسم کی اعضاء کی سوزش کی بیماری (ملٹی سسٹم انفلیمیٹری  سنڈروم) سندھ میں پھیل رہی ہے۔ سندھ بھر سے اب تک  تقریباً 25 مشتبہ واقعات موصول ہوئے ہیں اور ان میں سے تین کی بیماری کی تصدیق ہوگئی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ یہ وائرس مدافعتی نظام کے ردعمل میں خرابی کا نتیجہ ہے۔ اس کی مماثلت کاواساکی بیماری اور سائٹوکائن ریلیز سنڈروم سے ہے۔ ایک سال سے کم عمر یا ایسے بچے جو پہلے ہی جسمانی عوارض میں مبتلا ہیں ان پر بیماری کے اثرات زیادہ شدید ہوجاتے ہیں۔

ڈاکٹر حبا عتیق نے کہا کہ چائلڈ لائف سندھ اور بلوچستان کے تمام سرکاری ٹیچنگ اسپتالوں میں بچوں کے ایمرجنسی رومز چلاتی ہے۔ ان رومز میں ڈبلیو ایچ او کے رہنما اصولوں کو بروئے کار لاکر ایسے بچوں کی شناخت کے بعد ان کو فوری طور پر زندگی بچانے والی دوائیں فراہم کی جارہی ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More