پہلا فلسطینی راک بینڈ جلد ہی منظر عام پر آنے کے لیے تیار

وائس آف امریکہ اردو  |  Aug 05, 2021

ویب ڈیسک — غزہ میں چار نوجوانوں نے مل کر فلسطینی اتھارٹی کا پہلا راک بینڈ بنایا ہے۔ ایک اکاؤنٹنٹ، دو وکلا اور ایک دیہی معیشت کے ماہر پر مشتمل اس راک بینڈ کا کہنا ہے کہ وہ راک کے ذریعے اپنے علاقے کا درد بیان کریں گے۔

'اوسپرے وی' کے نام سے موسوم یہ گروپ دو برس پہلے قائم ہوا جب انہوں نے آن لائین ویڈیوز پوسٹ کرنا شروع کیں اور اپنے چہروں کو چھپا کر رکھا۔

خبر رساں ادارے رائیٹرز کے مطابق، اب بینڈ منظر عام پر آنے کو تیار ہے اور اپنے گانوں کے ذریعے اسرائیلی فلسطینی تنازع پر اپنے جذبات کا اظہار کرے گا۔

اپریل میں گیارہ روز تک جاری رہنے والی کشیدگی کے دوران انہوں نے ’لائیو فرام غزہ‘ نامی آن لائین کانسرٹ منعقد کیا، تاکہ فلسطینی اتھارٹی کے موسیقاروں کے لیے رقم اکٹھی کی جائے۔ اس کانسرٹ میں پنک فلائیڈ کی وجہ سے مشہور راجر واٹرز نے بھی حصہ لیا۔

SEE ALSO:جمائما نے وینس فلم فیسٹیول کے لیے منتخب پاکستانی فلم کا حصہ بننے کی ہامی کیوں بھری؟  بینڈ کے گیتوں کے لکھاری مومن الجارو نے رائیٹرز کو بتایا کہ اوسپرے وی کا پیغام آفاقی کے علاوہ غزہ سے متعلق بھی ہے۔

پیشے کے اعتبار سے وکیل، الجارو نے بتایا کہ وہ ان مسائل پر بھی بات کرنا چاہتے ہیں جن کا تعلق دنیا میں سب سے ہے لیکن، چونکہ وہ ایسے علاقے سے آئے ہیں جو متعدد جنگوں اور تنازعات کا شکار رہا ہے، اس لیے وہ غزہ سے متعلق بھی پیغام کو اپنے گیتوں میں شامل کرنا چاہتے ہیں۔

بینڈ کے ایک گیت ’ہوم‘ یعنی ’گھر‘ کا ایک بول ہے کہ ’’ہم اپنا درد چیخ چیخ کر سنائیں گے، کیا تم ہماری آواز سن سکتے ہو؟‘‘

ایڈوب فلیش پلیئر حاصل کیجئےEmbedshareکپڑوں پر بلاک پرنٹنگ کیسے کی جاتی ہے؟EmbedshareThe code has been copied to your clipboard.widthpxheightpxفیس بک پر شیئر کیجئیے ٹوئٹر پر شیئر کیجئیے The URL has been copied to your clipboardNo media source currently available

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More