حالیہ سیلاب میں امریکی امداد میں کمی کی وجہ وسائل کا فقدان ہے، امریکہ پاکستان تعلقات نہیں، امریکی محکمہ خارجہ کے قونصلر ڈیرک شولیٹ

بی بی سی اردو  |  Sep 25, 2022

امریکی محکمہ خارجہ کے قونصلر ڈیرک شولیٹ نے کہا ہے کہ سنہ 2010 کے سیلاب کے برعکس حالیہ سیلاب کے دوران امریکی امداد میں کمی کی وجہ پاکستان امریکہ تعلقات نہیں بلکہ وسائل کا فقدان ہے۔

ڈیرک شولیٹ نے رواں ماہ کے آغاز میں پاکستان کا دورہ کیا تھا جہاں انھوں نے سیلاب سے ہونے والی تباہی کے حوالے سے پانچ کروڑ 50 لاکھ ڈالر کی امداد دینے کی یقین دہانی کے علاوہ پاکستان امریکہ تعلقات کے 75 برس مکمل ہونے کے حوالے سے تقریبات میں بھی شرکت کی تھی۔

انھوں نے واشنگٹن سے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ان تمام موضوعات پر تفصیلی گفتگو کی۔

خیال رہے کہ مبصرین کی جانب سے پاکستان میں حالیہ سیلاب سے ہونے والی تباہ کاریوں کے بعد اقوامِ عالم کے سست ردِ عمل کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

سنہ 2010 کے سیلاب کے باعث حالیہ سیلاب سے کم تباہی ہوئی تھی تاہم امریکہ سمیت دیگر ممالک کی جانب سے اس ضمن میں بڑھ چڑھ کر امداد دینے کے علاوہ آئی ایم ایف سے پاکستان کے لیے شرائط میں نرمی کا بندوبست بھی کیا گیا تھا۔

اقوامِ متحدہ کی جانب سے جاری اعداد و شمار کے مطابق سنہ 2010 کے سیلاب کے دوران امریکہ کی جانب سے پاکستان کے لیے 90 کروڑ ڈالر کی امداد کا اہتمام کیا گیا تھا اور آئی ایم ایف سے بجٹ خسارے کے اہداف میں نرمی کی منظوری بھی دلوائی گئی تھی۔

اس کے علاوہ دیگر عالمی مالیاتی اداروں کی جانب سے بھی پاکستان کی مدد کرنے میں امریکی تعاون پیش پیش تھا۔

تو کیا وجہ ہے کہ اس مرتبہ امریکہ کی جانب سے ہچکچکاہٹ دکھائی جا رہی ہے؟

BBCڈیرک شولیٹ نے رواں ماہ کے آغاز میں پاکستان کا دورہ کیا تھا اور سیلاب سے ہونے والی تباہی کے لیے پانچ کروڑ پچاس لاکھ ڈالر کی امداد کا وعدہ کیا تھا’اس وقت ہمارے پاس سنہ 2010 جتنے وسائل نہیں‘

واشنگٹن سے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ڈیرک شولیٹ کا کہنا تھا کہ سنہ 2010 میں صورتحال یکسر مختلف تھی۔

انھوں نے بتایا کہ ’امریکی کانگریس نے اس وقت پاکستان میں عوام کی فلاح کے لیے اربوں ڈالر مختص کر رکھے تھے جو افغان جنگ کے تناظر میں کی گئی کوششوں کے اعتراف میں دیے گئے تھے لیکن اس وقت ہمارے پاس وہ وسائل نہیں۔‘

یاد رہے کہ سنہ 2010 میں افغان جنگ عروج پر تھی اور اس دوران امریکہ پاکستان کو اپنا قریبی اتحادی سمجھتا تھا تاہم گذشتہ 12 سال کے دوران امریکہ پاکستان تعلقات میں اتار چڑھاؤ دیکھنے کو ملے ہیں۔

گذشتہ برس امریکی کی سربراہی میں نیٹو افواج کا افغانستان سے انخلا ہوا تھا جس کے بعد سے وہاں طالبان کی حکومت ہے۔

تاہم ڈیریک شولیٹ کے مطابق امداد میں واضح کمی کی وجہ تعلقات میں سرد مہری ہرگز نہیں بلکہ عالمی معاشی بحران اور یوکرین جنگ بھی اس کی وجوہات میں سے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’دنیا میں تقریباً ہر جگہ ہی معاشی مشکلات گھمبیر ہو رہی ہیں اور یورپ اس وقت یوکرین جنگ کے باعث اپنے سب سے بڑے انسانی المیے سے گزر رہا ہے۔‘

’یورپی یونین نے اس سال کے اپنے زیادہ تر وسائل پہلے ہی خرچ کر دیے ہیں لیکن ہمیں یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ سیلاب متاثرین کی بحالی میں اگلے کئی ماہ لگ سکتے ہیں اس لیے ہمیں امداد کے لیے تیار رہنے کی ضرورت ہے۔‘

اس بارے میں مزید بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’میری پاکستان میں موجودگی کے دوران اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل بھی وہاں موجود تھے اور انھوں نے بھی واضح کیا ہے کہ اس حوالے سے مزید امداد دی جائے گی۔‘

انھوں نے کہا کہ ’آنے والے دنوں میں ورلڈ بینک پاکستان میں سیلاب کے حوالے سے اپنا تجزیہ پیش کرے گا جس سے یہ معلوم ہو گا کہ پاکستان میں کن چیزوں کی خصوصاً ضرورت ہے اور جب ہمارے پاس یہ معلومات ہوں گی، تو ہمیں واضح انداز میں حکمتِ عملی بنانے کا موقع ملے گا۔‘

Getty Images’اگلی آئی ایم ایف میٹنگ میں سیلاب سے تباہی کو ملحوظِ خاطر رکھنا ہو گا‘

پاکستان میں سیلاب کی تباہی کا اعتراف کرتے ہوئے شولیٹ ڈیرک کا کہنا تھا کہ ’پاکستان کا میلوں پر محیط حصہ ڈوبا ہوا ہے اور ایسا لگتا ہے کہ پورے ملک کا ایک بڑا حصہ اب ایک جھیل کی شکل اختیار کر گیا ہے اور پاکستان میں ہونے والی میٹنگز میں ہمیں بتایا گیا کہ کچھ حصہ کئی ماہ تک پانی میں ڈوبا رہے گا۔‘

انھوں نے کہا کہ ’لاکھوں افراد بے گھر ہیں اور اس کے باعث فصلوں اور انفراسٹرکچر کو بھی شدید نقصان پہنچا ہے اس لیے ایک تو فوری بحران ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ سیلاب کے اثرات کئی مہینوں تک نظر آئیں گے۔‘

پاکستان کو سنہ 2010 میں آئی ایم ایف کی جانب سے ریلیف دیا گیا تھا اور اسے بجٹ خسارے کے اہداف کے حوالے سے چھوٹ دی گئی تھی تاہم اس مرتبہ تاحال اس کے آثار دکھائی نہیں دے رہے۔

یہ بھی پڑھیے

شدید سیلاب اور آئی ایم ایف پروگرام کے باوجود بیرونی ممالک پاکستان کو پیسہ کیوں نہیں دے رہے؟

’گرمی شدید تھی اور وقت کم مگر انجلینا بار بار خواتین سے بات کرنے رک جاتی تھیں‘

پاکستان میں آنے والے سیلابوں کا ماحولیاتی تبدیلی سے کیا تعلق ہے

ڈیرک شولیٹ کا کہنا تھا کہ امریکہ آئی ایم ایف بورڈ کی جانب سے گذشتہ ماہ پاکستان کو متعدد ارب ڈالر دینے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتا ہے اور ہمیں معلوم ہے کہ نومبر میں اس حوالے سے ایک اور اہم میٹنگ ہونی ہے اور اب یہ واضح ہے کہ ہمیں سیلاب کے باعث ہونے والی تباہی کو ملحوظِ خاطر رکھنا ہو گا لیکن میں قبل از وقت کچھ نہیں کہنا چاہوں گا۔

’تاہم میں یہ ضرور کہوں گا کہ واشنگٹن کو پاکستان کو درپیش معاشی چیلنجز کا ادراک ہے اور یہ سیلاب کے باعث مزید سنگین ہو گئے ہیں۔‘

’عمران خان کے مداخلت کے دعوؤں میں کوئی صداقت نہیں‘

پاکستان کے سیاسی منظرنامے پر گذشتہ کئی ماہ سے ’امریکی سازش‘ کی بازگشت سنائی دیتی رہی ہے۔

اس کی وجہ سابق وزیرِ اعظم عمران خان کی اپنی گذشتہ حکومت کے خلاف تحریکِ عدم اعتماد کی کامیابی ہے جسے وہ ’ریجیم چینج کی امریکی سازش‘ قرار دیتے رہے ہیں۔

جب ڈیریک شولیٹ سے اس دعوے کے بارے میں سوال کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ’ہماری جانب سے مداخلت کے دعوؤں میں کوئی صداقت نہیں، میں بس اتنا ہی کہنا چاہوں گا۔‘

انھوں نے امریکہ پاکستان تعلقات کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ ’میرا پاکستان کا حالیہ دورہ جس میں میرے ساتھ محکمہ دفاع سمیت دیگر اداروں کے اہم عہدیداران موجود تھے پاکستان کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے ہماری عزم کا اظہار ہے۔‘

’ہمارے پاکستان کے ساتھ اچھے تعلقات ہیں اور پاکستان امریکہ تعلقات کی 75ویں سالگرہ کے موقع پر ہمیں ان تعلقات کی بہتری کے بارے میں بھی سوچنا ہو گا۔‘

’پاکستان امریکہ تعلقات کو کسی دوسرے ملک کے تناظر میں نہیں دیکھتے‘

حال ہی میں امریکی وزارتِ دفاع نے پاکستان کو ایف 16 طیاروں کی دیکھ بھال کے لیے آلات اور سروسز کی مد میں 45 کروڑ ڈالر کے ممکنہ معاہدے کی منظوری دی تھی تاہم ایسی میڈیا رپورٹس سامنے آئی تھیں جن کے مطابق انڈیا کی جانب سے اس معاہدے کی مخالفت کی گئی ہے۔

تاہم ڈیریک شولیٹ کا کہنا تھا کہ ’ہم پاکستان امریکہ تعلقات کو کسی دوسرے ملک کے تناظر میں نہیں دیکھتے، پاکستان اور امریکہ کے تعلقات اپنی جگہ اہم ہیں۔‘

انھوں نے کہا کہ پاکستان اور امریکہ کے درمیان مضبوط دفاعی روابط کی ایک طویل تاریخ ہے اسی لیے ہمیں ایف 16 طیاروں کی دیکھ بھال کے حوالے سے پاکستان سے معاہدہ کرنے پر خوشی ہوئی۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’امریکہ پاکستان کے ساتھ نہ صرف عسکری روابط بہتر کرنا چاہتا ہے بلکہ معاشی روابط میں بھی بہتری چاہتا ہے۔‘

’ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے ساتھ مل کر مشترکہ اہداف کا حصول اور چیلنجز کا سامنا کریں۔‘

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More