امریکہ میں آٹھویں روز بھی احتجاج: مظاہرین کی کرفیو کی خلاف ورزی، لوٹ مار

وائس آف امریکہ اردو  |  Jun 03, 2020

ویب ڈیسک — 

امریکہ میں سیاہ فام شخص جارج فلائیڈ کی ہلاکت کے خلاف ملک بھر میں آٹھویں روز بھی احتجاج کا سلسلہ جاری رہا۔ مختلف شہروں میں کرفیو کی خلاف ورزی اور لوٹ مار کے متعدد واقعات بھی رپورٹ ہوئے ہیں۔

ہزاروں امریکی شہری منگل کو بھی سڑکوں پر جمع ہوئے اور پولیس کے خلاف شدید احتجاج کیا۔ مظاہرین نے ریلیاں نکالیں اور جارج فلائیڈ سے اظہارِ یکجہتی بھی کیا۔

جارج فلائیڈ کی ہیوسٹن میں رہائش گاہ کے باہر بھی ہزاروں افراد جمع ہوئے اور ان کے اہلِ خانہ سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے فلائیڈ کو خراجِ عقیدت پیش کیا۔

دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں مظاہرین ایک مرتبہ پھر وائٹ ہاؤس کے باہر پارک میں جمع ہوئے جہاں سے پیر کو پولیس نے انہیں آنسو گیس کی شیلنگ کرتے ہوئے اٹھا دیا تھا۔ نیشنل گارڈ کے درجنوں دستوں نے لنکن میموریل کا کنٹرول بھی سنبھال لیا جہاں مظاہرین کی بڑی تعداد موجود تھی۔

اسی طرح لاس اینجلس، فلاڈیلفیا، اٹلانٹا اور سیٹل میں بھی ریلیوں میں مظاہرین کی بڑی تعداد نے شرکت کی جب کہ نیویارک میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئیں اور لوٹ مار کے بھی متعدد واقعات رپورٹ ہوئے۔

امریکہ کے آئندہ صدارتی انتخابات میں صدر ٹرمپ کے ممکنہ ڈیموکریٹک حریف جو بائیڈن نے اپنے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ جب ہزاروں امریکی وائٹ ہاؤس کے باہر پر امن طور پر احتجاج کر رہے تھے۔ اس وقت صدر نے فوٹو شوٹ کے لیے ان پر آنسو گیس کی شیلنگ کرائی۔

انہوں نے کہا کہ صدر ٹرمپ کو عوام نے تمام امریکیوں کی خدمت کے لیے منتخب کیا تھا لیکن وہ صرف اپنے مفادات کو دیکھ رہے ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More